Tag Archives: Sherbat

بلوچ لاپتہ افراد : ایک روح شکن داستان (حصہ دوم) تبصرہ : میر محمد علی ٹالپر ترجمہ: لطیف بلیدی

بلوچ کیساتھ پاکستانی ریاست کا سلوک کینہ پرور اور سفاکانہ ہے اور کمزور بہانے پیش کرکے وہ اپنی ذمہ داریوں سے انحراف جاری رکھے ہوئے ہے

Mir Mohammad Ali Talpur

ایک لاپتہ بیٹے، بھائی، یا دوست کا درد کسی شخص کی نفسیات پر گہری چھاپ بنائے رکھتا ہے۔ یہ ایک ان مٹ درد ہے، اسے نہ تو وقت اور نہ ہی دلاسے کم کرسکتے ہیں۔ دو ہفتے قبل، میں اپنے ساتھی ’جانی‘ دلیپ داس کی 91 سالہ ماں سے اپنی ادائیگیء احترام کیلئے گیا۔ اس کے پہلے الفاظ تھے، ”میرا جانی کیسا ہے؟“ وہ اب بھی یہی سمجھتی ہے کہ وہ زندہ ہے اگرچہ یہ 1975ء کا سال تھا جب اسے شیر علی مری کے ہمراہ فوج کے انٹیلی جنس نے بیل پٹّ سے اٹھایا تھا۔ انہوں نے اور ان کے شوہر، ایئر کموڈور (ر) بلونت داس، جو چند سال قبل انتقال کرگئے، نے اسکے بارے میں کوئی خبر حاصل کرنے کی بہت کوشش کی لیکن تمام محنت بیکار گئی۔ اگرچہ مسز داس کو دل کے کئی دورے پڑے ہیں لیکن لاپتہ بیٹے کی یادیں اور درد جانے کا نام ہی نہیں لیتیں۔

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up

COMMENT : Baloch missing persons: a soul-rending saga — II — Mir Mohammad Ali Talpur

The Pakistani state is unforgiving and brutal in its treatment of the Baloch and it continues to deny responsibility by presenting flimsy excuses

Mir Mohammad Ali TalpurThe pain of a missing son, brother, or a friend remains deeply etched on a person’s psyche. It is an inerasable pain, which neither time nor consolations diminish. A fortnight ago, I had gone to pay my respects to my comrade ‘Johnny’ Duleep Dass’s 91-year-old mother. Her first words were, “How’s my Johnny?” She still believes he is alive though it was in 1975 that he along with Sher Ali Marri was picked up by army intelligence at Belpat. She and her husband, Air Commodore (Retd) Balwant Dass, who passed away some years ago, tried to get some news about him but all efforts were in vain. Although Mrs Dass has suffered strokes but the memory and the pain of her disappeared son refuses to go away.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up

غیر مو ثر اور بیکار معاہدات کا فائدہ کیا؟ تبصرہ : میر محمد علی ٹالپر ترجمہ: لطیف بلیدی

بلوچ کو 1948 کے بعد سے ریاست کے ہاتھوں شدید اذیتیں جھیلنا پڑیں لیکن انہوں نے اپنے وقار کوبرقرار رکھا اور گولیوں کی بوچھاڑ میں بھی ثابت قدم جرا ت کا مظاہرہ کیا۔ بلوچ میتوں پر گریہ گری کو کمزوری کی علامت سمجھتے ہیں

تشدد اور دیگر ظالمانہ، غیر انسانی یا ذلت آمیز برتاو یا سزا کیخلاف معاہدہ، جسے تشدد کیخلاف اقوام متحدہ کے کنونشن کے طور پر بھی جانا جاتا ہے، ایک بین الاقوامی انسانی حقوق سے متعلق دستاویز ہے جسکا مقصد دنیا بھر میں تشدد کی روک تھام ہے۔ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے اسے 10 دسمبر، 1984 کو منظور کیا؛ اسکا نفاذ 26 جون، 1987 کو عمل میں آیا۔ 26 جون کو، تشدد کے متاثرین کی حمایت میں بین الاقوامی دن کے طور پر تسلیم کیا گیا ہے۔ پاکستان نے 17 اپریل، 2008 کو اس پر دستخط کئے اور 3 جون، 2010 کو اسکی توثیق کی۔ اس نے یہ دن بلند خان کی تشدد زدہ اور گولیوں سے چھلنی لاش کو مستونگ کے علاقے دشت میں پھینک کر منایا، جسے کوئٹہ سے پانچ روز قبل اغواء کیا گیا تھا۔

اس معاہدے پر دستخط کرنے کے بعد پاکستانی ریاست نے بلوچستان میں اسے صریحاً روند ڈالا ہے۔ 2010 ءمیں 103 لاشیں ملیں، جبکہ 2011 نے 203 ہونے پر اس تعداد میں اضافہ دیکھا اور اس سال اب تک 80 لاشیں برآمد ہوچکی ہیں۔ گنتی کے لحاظ سے قلات ضلع سرفہرست ہے، جہاں ان میں سے 133 کی تعداد میں متاثرین پائے گئے؛ مکران ضلع میں 60 لاشیں برامد ہوئیں اور 102 متاثرین کوئٹہ میں پائے گئے۔ نوٹ: یہ اعداد و شمار صرف گزشتہ 18 ماہ کے ہیں اور اس سے پہلے بھی بہت سے متاثرین تھے، اور ان میں پروفیسر صبا دشتیاری جیسے لوگ اور ہدف بناکر قتل کئے گئے دیگر متاثرین شامل نہیں ہیں۔ کوئی بھی معاہدہ جب تک کہ اسے پابندیوں سے نتھی نہ کیا جائے کارگر ثابت نہیں ہوسکتا، اُن لوگوں کے ہاتھ روکنے کیلئے کہ جنہیں ماضی میں تمام مظالم کیلئے استثنیٰ حاصل رہی ہو۔ فرنٹیئر کور (ایف سی)، انٹیلی جنس ایجنسیوں اور ان کے پٹھوو ں کہ جنکے مظالم کی غلاظت سے بلوچستان کی سرزمین بھری پڑی ہے، لیکن پھر بھی بلوچ اپنی جدوجہد کیساتھ ڈٹے ہوئے ہیں۔

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up

What use are toothless and worthless conventions? — Mir Mohammad Ali Talpur

The Baloch have suffered terribly at the hands of the state since 1948 but maintain their dignity and have shown resolute courage under fire. The Baloch consider crying over the dead a sign of weakness

The Convention against Torture and Other Cruel, Inhuman or Degrading Treatment or Punishment, also known as the United Nations Convention against Torture, is an international human rights instrument aimed at preventing torture around the world. The United Nations General Assembly adopted it on December 10, 1984; it came into force on June 26, 1987. June 26 is recognised as the International Day in Support of Torture Victims. Pakistan signed it on April 17, 2008 and ratified it on June 3, 2010. It observed this day by dumping Buland Khan’s tortured, bullet-riddled body in Dasht, Mastung, abducted five days before from Quetta.

The Pakistani state since signing this convention has decidedly trampled all over it in Balochistan. In 2010, 103 bodies were discovered, while 2011 saw this number rise to 203 and this year, so far, 80 bodies have been recovered. Kalat district heads the count, accounting for 133 victims; 60 bodies were discovered in Makran district and 102 victims were found in Quetta. Note: these figures are only for the past 18 months and many were victims before too, and it does not include people like Professor Saba Dashtiyari and other victims of targeted killings. No convention unless backed by sanctions is good enough to deter those who have enjoyed immunity for all past atrocities. Victims of the Frontier Corps (FC), intelligence agencies and their henchmen’s brutality litter Balochistan’s landscape but the Baloch persist with their struggle.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up