Tag Archives: Mir Mohammad Ali Talpu

A slow motion Chernobyl disaster

Mir Mohammad Ali Talpur

Coal is an unforgiving servant as it exacts its proverbial ‘pound of flesh’ from its masters.

To begin with, mined coal needs to be washed of impurities which produce a fantastic amount of coal sludge (slurry) that in turn needs a dam for storage. This sludge contains mercury, arsenic, beryllium, cadmium, nickel and selenium, all harmful for people and ecology. Little wonder that people affected by the dam now being established near Ghorano village in Thar are vehemently but futilely protesting.

Continue reading

Advertisements

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur

”وائے وطن ہُشکیں دار“

Books on Balochistan confiscated

تحریر: میر محمد علی ٹالپر

ترجمہ: لطیف بلیدی

Mir Muhammad Ali Talpurکرسچن یوہان ہائنرخ ہائن (13 دسمبر، 1797 تا 17 فروری، 1856) ایک صحافی، مضمون نگار اور سب سے اہم جرمن رومانی شاعروں میں سے ایک تھے۔ انہوں نے ہٹلر سے ایک سو سال قبل، جب انہوں نے وہ کتابیں جلائیں جنہیں نازی وطن دشمن اور تخریبی سمجھتے تھے، کہا تھا کہ، ”جہاں کہیں بھی انہوں نے کتابیں جلائیں، ان کا انجام انسانوں کو جلانے پر ہوگا“ اور نازی دور حکومت میں بالکل ایسا ہی ہوا اور یہ نہ صرف جرمنوں کیساتھ ہوا بلکہ یورپ بھر کے عوام کیساتھ۔ کتب سوختگی کے عمل کو ببلیوکلاسم یا لبریسائیڈ کے طور پر جانا جاتا ہے اور اسے اسلئے کیا جاتا ہے کیونکہ حکمران تحریری الفاظ اور علم سے خوفزدہ ہوتے ہیں؛ اسکی ایک طویل تاریخ ہے اور اختیارداروں کا اختلاف رائے اور لوگوں کی جداگانہ حیثیت کا خوف اسکے فروغ کا باعث ہوتے ہیں اور اسکا مقصد عوام کو انکے جوابی بیانیے سے محروم کرنا ہوتا ہے۔ یہ عام طور پر چند کتابوں کیساتھ شروع ہوتی ہے لیکن مقتدرہ کے بڑھتے ہوئے عدم تحفظ کیساتھ یہ آہستہ آہستہ وسعت اختیار کرلیتی ہے۔

BALOCHISTAN: RAIDING THE BOOKS, PATRONIZING THE POPPY CULTIVATION

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur

”محبت خریدی نہیں جاسکتی“

تحریر : میر محمد علی ٹالپر
ترجمہ: لطیف بلیدی

وہ لوگ جو اس غلیظ پیسے کو قبول کریں گے یقینا یہ وہ لوگ نہیں ہیں جنہیں بلوچستان سے کوئی محبت ہے اور بیشک انہیں پاکستان سے بھی کوئی محبت نہیں ہوگی؛ ان کی وفاداری پیسے سے ہے

Mir Muhammad Ali Talpurحال ہی میں، بلوچستان حکومت نے ان بلوچوں کو، جو اپنے حقوق کیلئے جدوجہد کر رہے ہیں، اپنے مادر وطن کے مقدس مقصد کو ترک کرنے کیلئے عام معافی کی پیشکش کی ہے۔ اس نے مجھے مشہور زمانہ بیٹل کےمدتوں قبل مشہور گانے کی یاد دلا دی، ”مجھے محبت خرید کر نہیں دے سکتے“، کیونکہ پیسہ محبت اور وفاداری نہیں خرید سکتے۔ اسکے اشعار کچھ یوں ہیں:

” مجھے محبت خرید کر نہیں دے سکتے، میری جان
مجھے محبت خرید کر نہیں دے سکتے
اے میرے دوست میں تمہارے لئے ہیرے کی ایک انگوٹھی خریدوں گا اگر اس سے تم اچھا محسوس کرو
اے میرے دوست میں تمہیں ہر چیز لاکر دونگا اگر اس سے تم اچھا محسوس کرو
کیونکہ مجھے پیسے کی زیادہ پرواہ نہیں ہے، اور پیسہ مجھے محبت خرید کر نہیں دے سکتا

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur

“Can’t buy me love” – Mir Mohammad Ali Talpur

Those who will accept this dirty money are surely not those who have any love for Balochistan and assuredly they will not have it for Pakistan either; their loyalty is to money

Mir Muhammad Ali TalpurRecently, the Balochistan government offered the Baloch who are struggling for their rights to give up the sacred cause of their motherland for amnesty. It reminded me of the famous Beatle hit song of yore, “Can’t Buy Me Love”, because money cannot buy love and loyalty. The lyrics are:

Can’t Buy Me Love

Can’t buy me love, love

Can’t buy me love

I’ll buy you a diamond ring my friend if it makes you feel alright

I’ll get you anything my friend if it makes you feel alright

Cos I don’t care too much for money, and money can’t buy me love

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur

Mehran Marri has been chosen by those ideologically, practically aligned with Baba Marri: Mir Mohammad Ali Talpur

Mir Muhammad Ali TalpurMarri Peoples’ decision to choose Mehran Marri as the Political Successor of Nawab Khair Bakhsh Khan Legacy.

Marris who have been in the thick of Baloch National Struggle and were politically and ideologically aligned to Nawab Khair Bakhsh Khan have chosen his youngest son Mehran Marri as his political successor which also translates as him succeeding the mantle of Chieftainship of the Marri tribe.

Those who have taken this important political decision were trusted by Nawab Sahib and remained in the national struggle arena in spite of the heavy price they have had to pay in human and material for staying committed to his ideals.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, News

آزادی کی لگن تبصرہ : میر محمد علی ٹالپر ترجمہ: لطیف بلیدی

انہوں نے اپنے اقدار اور اصولوں پر عمل کرنے کی بہت بڑی قیمت اداکی

Mir Muhammad Ali Talpur

نواب خیر بخش مری 29 فروری 1928 کو پیدا ہوئے، انکا نام انکے نامور دادا کی وساطت سے رکھا گیا جنہوں نے پہلی عالمی جنگ کیلئے مریوں کو بطور ایندھن فراہم کرنے سے انکار کردیا تھا اور اسکے لئے انہوں نے 1918ءمیں برطانیہ کے خلاف گمبز اور ہرب کے تاریخی لڑائیاں لڑیں۔

وہ سردار دودا خان کی بھی اولاد میں سے تھے جن کے تحت مریوں نے مئی 1840 میں سارتاف کے علاقے میں لیفٹیننٹ والپول کلارک کی قیادت میں برطانوی فوجیوں کا مکمل صفایا کیا تھا۔ پھر اگست 1840 میں، میجر کلبورن کے تحت ایک بڑی فوج کاہان کی امداد کو بھیجی گئی لیکن نفسک سے ہی اسکا راستہ تبدیل کرلیا گیا۔

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur

A love for liberty – Mir Mohammad Ali Talpur

Many political analysts claim that Nawab Sahib was a late convert to the idea of an independent Balochistan; but this is patently incorrect.

Mir Muhammad Ali TalpurNAWAB Khair Bakhsh Marri, born on Feb 29, 1928, was named after his illustrious grandfather who, unwilling to provide Marris as cannon fodder for the First World War, fought the historic battles of Gumbaz and Harab against the British in 1918.

He was also a descendent of Sardar Dodah Khan, under whom the Marris in May 1840, at Sartaaf, decimated the troops led by Lt Walpole Clarke. Again in August 1840, a large force under Major Clibborn sent for relieving Kahan was routed at Nafusk.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur