Tag Archives: Mama Qadeer

After Modi’s remarks, Pak media has started mentioning Balochistan: Analysts

Voice for Baloch Missing Persons

“There has been a deliberate attempt to keep the two issues separate,” he said. “One is seen as a humanitarian crisis while the other is our internal matter that is being blown up by India to embarrass us.”

By: Imtiaz Ahmad, Hindustan Times, Islamabad

Prime Minister Narendra Modi’s remarks on Balochistan may have achieved little on the ground but Baloch activists and independent analysts say they have brought the unrest in Pakistan’s largest province into focus once again.

But the Pakistani media has, by and large, stayed away from discussing the human rights situation in Balochistan, including the issues of thousands of “missing persons” or victims of enforced disappearances.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Write-up

موت کے سائے تلے شجاعت

vbmplongmarch-islamabad

تحریر: میر محمد علی ٹالپر

ترجمہ : لطیف بلیدی

روزانہ 30 کلومیٹر چلنا کوئی کھیل نہیں ہے، حتیٰ کہ سخت جان لوگوں کیلئے بھی، اور یہاں پر تو نازک اور کمزور لڑکیاں، ایک بوڑھا آدمی اور ایک دس سالہ لڑکا تھے

Mir Muhammad Ali Talpurماما عبدالقدیر ریکی کے بیٹے شہید میر جلیل ریکی 13 فروری 2009ء میں اغواء کیے گئے؛ وہ بلوچ ریپبلکن پارٹی کے سیکرٹری اطلاعات تھے۔ قدرتی طور پر ماما قدیر نے اپنے بیٹے کی رہائی کی کوشش کی کیونکہ ’مارو اور پھینک دو‘ کی منظم پالیسی کی پیشگی طور ابتداء ہوچکی تھی اور بلوچ کارکنوں کی بری طرح سے مسخ شدہ لاشیں بلوچستان میں ملنا شروع ہوئی تھیں۔ اپنے بیٹے کی حفاظت کو یقینی بنانے کی کوششوں کے بدلے میں انہیں صرف اور صرف جھوٹے وعدے یا دھمکیاں ملیں۔ جب انہیں احساس ہوا کہ ریاست کو اس ظلم و ستم کیلئے شاید ہی کوئی چیلنج کرے تو انہوں نے بلوچ کارکنوں کے اس غیر انسانی اور ظالمانہ اغواء اور قتل کیخلاف احتجاج شروع کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس احتجاج کو اب 2,287 دن پورے ہوچکے ہیں۔ 28 جولائی 2009ء کو پریس کلبوں کے باہر علامتی بھوک ہڑتالی احتجاج کیے جارہے تھے۔ اس کے علاوہ 27 ستمبر 2009ء میں لاپتہ بلوچوں کی بازیابی کیلئے ایک تنظیم وائس فار بلوچ مسنگ پرسنز قائم کی گئی، ماما قدیر بطور اس کے وائس چیئرمین اور نصراللہ بلوچ، جن کے چچا اصغر بنگلزئی کو 2001ء میں اغوا کیا گیا تھا، بطور اس کے چیئرمین۔

Courage under fire

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur

Struggle for the Missing Baloch reaches Washington D.C.

The leaders of Voice for Baloch Missing Persons Farzana Majeed Baloch and Mama Qadeer Baloch speaking with Voice Of America (VOA) Urdu service in America about human rights situation in Balochistan.

 

Leave a comment

Filed under News

Courage under fire – Mir Mohammad Ali Talpur

vbmplongmarch-islamabad

Walking up to 30 kilometers a day is no mean feat even for a hardy lot and here were those delicate and weak girls, an old man and ten-year-old boy

Mir Muhammad Ali TalpurMir Jalil Reiki Shaheed, son of Mama Abdul Qadeer Reiki, was abducted on February 13, 2009; he was the information secretary of the Baloch Republican Party. Mama Qadeer naturally strove to secure the release of his son because the systematic policy of ‘kill and dump’ had started in earnest and the severely mutilated bodies of Baloch activists had started appearing in Balochistan. All he got in return for his efforts to secure his son’s safety was false promises or threats. Realising that the state was hardly being challenged for its atrocities, he decided to start a protest against the inhuman and unjust abductions and killings of Baloch activists. The protest is now 2,287 days old. There was a token hunger strike protest outside the press clubs on July 28, 2009. Moreover, on September 27, 2009 the Voice of Baloch Missing Persons (VBMP), an organisation for the recovery of the missing Baloch, was formed with Mama Qadeer as vice chairman and Nasrullah Baloch, whose uncle Asghar Bangulzai was abducted in 2001, as chairman.

موت کے سائے تلے شجاعت

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur

پاکستان کے ’غیر مرئی‘ شخص کا تنہا دھرنا

تحریر: بے نظیر شاہ
ترجمہ : لطیف بلیدی

بہت سے دیگر لوگوں کی طرح ماما قدیر کا بیٹا بھی غائب ہوا اور پھر مردہ پایا گیا۔ کئی سالوں بعد بھی وہ یہ جاننے کیلئے احتجاج کر رہے ہیں کہ کیوں۔

 پاکستان کے شورش زدہ صوبے بلوچستان میں بہت سے لوگ لاپتہ ہو ئے ہیں [شکیل عادل / اے پی]

پاکستان کے شورش زدہ صوبے بلوچستان میں بہت سے لوگ لاپتہ ہو ئے ہیں [شکیل عادل / اے پی]

کوئٹہ، پاکستان:- چند لوگ ہی قدیر ریکی سے بات کرنا چاہتے ہونگے، اور اس سے بھی کم انکے بارے میں بات کرنا چاہتے ہونگے۔

ہوسکتا ہے اس 75 سالہ شخص کو لوگ عقیدتاً پیار سے ”ماما قدیر“ کے نام سے پکارتے ہیں، اردو زبان میں اس کے معنی ”چچا“ کے ہیں، لیکن بہت سوں کا ماننا ہے ان سے زیادہ قربت خطرناک ہے۔ماما قدیر کئی سالوں سے ایک ایسی چیز پر احتجاج کررہے جس پر حکام کا دعویٰ ہے کہ اسکا کوئی وجود نہیں ہے، یعنی ان افراد کی گمشدگی جو شورش زدہ جنوب مغربی صوبے بلوچستان میں پاکستانی حکومت کی مخالفت کرتے ہیں جہاں سیکورٹی فورسز 2005 کے بعد سے ایک مسلح علیحدگی پسند تحریک کیخلاف جنگ لڑ رہے ہیں۔ماما قدیر اپنے بیٹے کو اس ممنوع تنازعے کی ہلاکتوں میں شمار کرتے ہیں۔

The lonely vigil of Pakistan’s ‘invisible man’

Continue reading

Leave a comment

Filed under Write-up

The lonely vigil of Pakistan’s ‘invisible man’

VBMP Long March

Like many others, Mama Qadeer’s son disappeared then was found dead. Years later, he is protesting to know why.

By : Benazir Shah

Quetta, Pakistan – Few people want to talk to Qadeer Rekhi – and even fewer want to talk about him.

The 75-year-old may be affectionately venerated as “Mama Qadeer” – mama meaning “uncle” in Urdu language – but many believe it is dangerous to be too closely associated with him.

For years, Mama Qadeer has protested something the authorities claim does not exist – the disappearance of people who oppose the Pakistani government in the restive southwestern province of Balochistan, where security forces have battled an armed separatist movement since 2005.

پاکستان کے ’غیر مرئی‘ شخص کا تنہا دھرنا

Continue reading

Leave a comment

Filed under Write-up

ویران کن وبا

تحریر: میرمحمد علی ٹالپر

ترجمہ: لطیف بلیدی

ویران کن وبا کو حوصلہ اس امر واقع سے ملتا ہے کہ یہاں لوگوں کی اکثریت اسکے حقیقی چہرے کو دیکھنے سے انکاری ہیں اور مختلف حیلوں بہانوں کے تحت اُس عمل کی حمایت نہ کرنے کیلئے خود کو تسلیاں دیتے ہیں جو کہ صحیح اور برحق ہے

Mir Muhammad Ali Talpurمشہور ببر شیر سیسل جو زمبابوے کے ہوانگ نیشنل پارک میں رہتا تھا، جولائی کے اوائل میں مارا گیا۔ اسے بہلا پھسلا کر پارک سے باہر لایا گیا، اسے تھیو برونکہورسٹ نامی ایک شکاری اور مینیسوٹا سے تعلق رکھنے والے ایک مقامی کسان آنیسٹ ٹریمور انڈلووو کی مدد سے ایک امریکی دندان ساز والٹر جیمز پامر نے آڑی کمان کیساتھ زخمی کردیا۔ 40 گھنٹوں کی کھوج کے بعد پامر نے آخرکار اسے مار ڈالا۔ پامر نے اسے مارنے کیلئے تقریباً پچاس ہزار امریکی ڈالر خرچ کیے۔ جب یہ خبر پھیلی تو دنیا اس کیخلاف یک زبان ہوکر کھڑی ہوگئی اور زمبابوے کے صدر موگابے کے نام ایک درخواست دائر کی گئی جس میں پامر کو سزا دینے کا مطالبہ کیا گیا، چند گھنٹوں کے اندر اندر اس پر 164,500 سے زائد افراد نے دستخط کیے۔ افسوس کی بات ہے کہ یہاں حتیٰ کہ جب انسان مارے جائیں تو تب بھی اس کیخلاف کوئی کسی کو نہیں اکساتا۔

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur