Tag Archives: bill to abolish the Sardari system

بندوق کے سائے تلے (دوسرا حصہ) تبصرہ : میر محمد علی ٹالپر ترجمہ: لطیف بلیدی

جو سردارترقیاتی مقاصد کے لئے مختص رقم کا غبن کرتے ہیں، حکومت کے ساتھ ملے ہوئے ہیں۔ ریاست کی زیر سرپرستی دہشت گردی اور بدعنوانی کے درمیان موجود شیطانی گٹھ جوڑ بلوچ عوام کو ان کے وسائل اور حقوق سے محروم کرنے کےلئے استعمال کیا جاتا ہے

اکرام سہگل ”بابتِ سلطنت اور فوج“ میں کہتے ہیں، ” وہاں ایک بلوچ صدر ہیں اور ایک بلوچ وزیر اعظم رہے ہیں۔ اس دفتر میں اپنے ادوار کے دوران، بلوچ نوابوں اور سرداروں میں سے کسی نے بھی اپنے لوگوں کی حالت میں بہتری لانے کی کوشش نہیں کی ہے۔“ وہ بھول جاتے ہیں کہ اسٹابلشمنٹ صرف ان ہی بلوچوں کو ’جگہ‘ دیتی ہے جو بلوچ عوام کو ان کے حقوق سے محروم رکھنے کی خاطر چشم پوشی کیلئے تیار ہوں۔ ’اسٹابلشمنٹ‘ بطور ادل بدل زیادتیوں اور کرپشن پر آنکھیں موند لیتی ہے۔ اب تو وہ ان لوگوں کی قوم پرستوں کیخلاف ’غلیظ جنگ‘ کو لڑنے کےلئے حوصلہ افزائی بھی کررہی ہے۔ عام بلوچ دونوں یعنی مرکز اور اس کے مقامی ایجنٹوں کی طرف سے کی جانے والی نا انصافیوں کا شکار ہے؛ اس سے غیر بلوچ سیادت کے تاثر کو تقویت ملی ہے۔ صرف سردار عطاءاﷲ مینگل کی واحد نمائندہ حکومت، جس نے 8 جولائی 1972 کو سرداری نظام کے خاتمے کا بل پیش کیا، اور بلوچ حقوق کے لئے کام کیا، نو ماہ کے بعد اسے برطرف کردیا گیا تھا۔ حالات میں بہتری کو برداشت نہیں کیا گیا۔

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up

COMMENT: In the shadow of the gun (Part 2) — Mir Mohammad Ali Talpur

The Sardars embezzling money meant for development purposes are in league with the government. The evil nexus between state-sponsored terrorism and corruption is used for depriving the Baloch people of their resources and rights

Ikram Sehgal in “Of Empire and Army” says, “There has been a Baloch president and a Baloch prime minister. During their time in office, none of the Baloch nawabs and sardars made any effort to ameliorate the conditions of their own people.” He forgets that the establishment ‘accommodates’ only those Baloch who connive in denying the Baloch people their rights. The ‘establishment’ as a quid pro quo turns a blind eye to excesses and corruption. It now even encourages them to fight a ‘dirty war’ against the nationalists. The ordinary Baloch suffers injustices from both the Centre and its local agents; this has reinforced the perception of non-Baloch hegemony. The only representative government of Sardar Ataullah Mengal, which presented the bill to abolish the Sardari system on July 8, 1972, and worked for Baloch rights, was dismissed after nine months. Amelioration of conditions was not tolerated.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up