Tag Archives: Baloch rights

Balochistan discourse: the tale of dominant narratives

Balochistan discourse

When it comes to the Balochistan discourse, there is always a built-in and dominant narrative that represents the ‘selected’ side of the matter — be it political, social or economic

By: Noor Ahmed Baloch

These days Balochistan is in news for two reasons. One, for the China Pakistan Economic Corridor (CPEC) and Gwadar, which gets a great deal of coverage in mainstream media; two, a combination of multiple problems, including the ongoing insurgency, which is a point of little discussion in media. Nonetheless, the historical background of Balochistan reveals much, and its current state of affairs is beyond how it is viewed. The other day in a discussion regarding Balochistan, a friend raised a very valid point saying that as much as Balochistan is rich in terms of natural resources, it is also rich in manpower and talent. There is much truth to that. But what really counts a great deal is how that is being utilised, facilitated and given the due space.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Write-up

Meanwhile, in Balochistan…

By Zohra Yusuf

Zohra YusufIf ever proof was needed that Punjab, Islamabad and the army are all that really matter in Pakistan, it is evident in the attention the two dharnas are getting, not only from the media but from politicians, the superior judiciary and those euphemistically referred to as the powers that be.

Contrast the non-stop interest in the two groups of protesters and their demands to the neglect that Balochistan is facing from each of the actors identified above.

It appears that neither the media nor the federal government nor the judiciary have a moment to spare for certain serious developments taking place in Balochistan.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Write-up

اس وقت بلوچ عوام کی نمائندہ قوتیں‌کونسی ہیں؟

تحریر:‌ انور ساجدی   ۔۔۔   روزنامہ انتخاب

 

Continue reading

Leave a comment

Filed under Interviews and Articles

بیٹے کو آزادی کے لئے قربان کرنے کو تیار ہوں۔ والدہ کبیر بلوچ

بلوچ وطن کی آزادی و تحفظ کے لئے میں‌اپنے بیٹوں کو قربان کرنے کے لئے تیار ہوں۔ چونکہ مادر وطن بلوچستان آج ہم سے قربانی کا تقاضا کررہا ہے جس طرح شہید اکبر بگٹی، شہید میر بالاچ مری، میر اسد مینگل، شہید نواب نوروز خان، شہید حمید بلوچ، اسلم گچکی، شہید شفیع بلوچ، شہید غلام محمد بلوچ، شہید لالا منیر، اور شہید شیر محمد بلوچ، اس سے قبل دیگر ہزاروں معلوم و نامعلوم بلوچوں نے دھرتی ماں کی پکار پر اپنے جانوں کو قربان کیا اس کے علاوہ سردار اختر جان مینگل سمیت دیگر ہزاروں نوجوانوں‌نے جیلوں میں اذیتیں برداشت کیں‌لیکن بلوچستان کی آزادی کے مطالبے سے ایک انچ بھی پیچھے نہیں‌ہٹے آج سیکنڑوں ماؤں نے اپنے جگر کے ٹکڑوں کو وطن پر قربان کیا ہے تو میں بھی اپنے بیٹے کبیر بلوچ و دیگر بیٹوں کو بھی بلوچ وطن کی آزادی کے نام کرتی ہوں۔ میں‌ان بزدل اور ریاستی تنخواہ خوروں سے اپنے بیٹے یا اس کے ساتھیوں‌کی رہائی کی اپیل کسی صورت نہیں کرونگی بلکہ صرف ایک بات کرونگی کہ صرف یہ بتادیں‌کہ ہمارے لخت جگر زندہ ہیں‌یا انہیں شہید کردیا گیا ہے اگر شہید کردیا گیا ہے تو ان کی لاشوں کو ہمارے حوالے کیا جائے

ستائیس مارچ کو خضدار سے دن دہاڑے سیشن کورٹ ڈی آئی جی آفس کے سامنے دوگاڑیوں میں سوار مسلح افراد نے کبیر بلوچ اور اس کے دیگر دو ساتھیوں عطاء اللہ بلوچ اور مشاق بلوچ کو اغواء کرکے لے گئے ان پر فائرنگ بھی کی گئی جو شدید زخمی ہوئے لیکن ایک ماہ گزرے جانے کے باوجود تاحال بازیاب نہیں‌ہوسکے۔

Leave a comment

Filed under News

بلوچ آئین کے تحت اپنا حق مانگ رہے ہیں

اعجاز مہر بی بی سی اردو ڈاٹ کام، اسلام آباد

بلوچ آئین کے تحت اپنا حق مانگتے رہے
بلوچ آئین کے تحت اپنا حق مانگتے رہے

ویسے تو بلوچ اور طالبان شدت پسندوں کا موازنہ نہیں کیا جاسکتا لیکن دونوں میں ایک بات مشترک ضرور ہے کہ دونوں نے اپنےمطالبات منوانے کے لیے ریاست سے مسلح مزاحمت کا راستہ اختیار کیا۔

جہاں طالبان بندوق کے زور پر مالاکنڈ ڈویزن میں شریعت کے نفاذ کے لیے حکومت کو جھکانے میں کامیاب ہوئے وہاں بلوچ اپنے صوبے کے وسائل کا کنٹرول حاصل کرنے اور صوبائی خود مختاری کے حصول میں ابھی تک کامیاب نہیں ہوئے ہیں۔

Continue reading

Leave a comment

Filed under News