Tag Archives: Baloch Press

ایک دُم چھلّا میڈیا تبصرہ : میر محمد علی ٹالپر ترجمہ: لطیف بلیدی

ایک کلبی، اجیر، اشتعال انگیز پریس کسی بھی ریاست کیلئے ایک قیمتی اثاثہ ہے جو اس بات کو یقینی بنانے پر تلی رہتی ہے کہ وہ اسکے نظریے کو ایک برترحقیقت کے طور پر قبول کروائے

بعض اخبارات (ڈیلی ٹائمزنہیں) نے کوئٹہ میں ایف سی کے زیرانتظام منعقد کیے گئے 14 اگست کے جشن کو برجستہ اور اشتیاق انگیز تقریبات کے طور پر پیش کرنے کی کوشش کی، لیکن یہ ستم ظریفی کہ وزیر اعلیٰ رئیسانی کی پرچم کشائی سمیت بیشتر تقریبات ایف سی کی منظم کردہ تھیں، لیکن وہ یہ بیان کرنے سے قاصر رہے؛ وہ سیلولر سروسز کی معطلی بھی بتانا بھول گئے جوکہ 23 مارچ کی مشق کا دہرانا تھا۔ اس بامقصد غلط بیانی کا مقصد محض لوگوں کو بیوقوف بنانا تھا تاکہ وہ یہ باور کرلیں کہ صرف چند شرپسند ہیں جو کہ بلوچستان کی صورتحال کیلئے ذمہ دار ہیں اور اس طرح سے وہ ایک سازگار ماحول پیدا کرلیں اور بلوچ کیخلاف زیادتیاں جاری رکھیں جو اپنے حقوق کیلئے جدوجہد کررہے ہیں۔ جوزف پولِٹسر کا اقتباس، ”ایک کلبی، اجیر، اشتعال انگیز پریس وقت گزرنے کیساتھ ساتھ اتنے ہی گھٹیا لوگ پیدا کریگا جتنا کہ وہ خود ہے،“ سچ لگتا ہے۔

Continue reading

Advertisements

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up

COMMENT: An embedded media —Mir Mohammad Ali Talpur

A cynical, mercenary, demagogic press is an invaluable asset for a state that is hell bent on ensuring that its ideology is accepted as the supreme truth 

Some newspapers (not Daily Times) tried to present the FC-managed and orchestrated August 14 celebrations in Quetta as spontaneous and fervent, but the irony that most events including the flag hoisting by Chief Minister Raisani was FC-organised was totally lost on them; they also forgot the cellular services suspension, a repeat of the March 23 exercise. This purposeful misreporting simply dupes people into believing that only some troublemakers are responsible for the situation in Balochistan and thus creates an atmosphere conducive for continuing excesses against the Baloch struggling for their rights. Joseph Pulitzer’s quote, “A cynical, mercenary, demagogic press will produce in time a people as base as itself,” rings true here.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up