بلوچ عوام کی یکجہتی ہی قابض کو ان کی سرزمین سے نکال سکتی ہے،بی این ایف


Black Day - 27 March 1948

کوئٹہ (سنگر نیوزبلوچ نیشنل فرنٹ(BNF ) نے27 مارچ یوم سیاہ کی مناسبت سے بلوچستان بھر میں ایک پمفلٹ کی اشاعت کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ27 بلوچ قوم نے ہر دور میں اور کیسے بھی حالات میں اپنے قومی اقدار و روایات اور زمین کی حفاظت کے لئے ہرقسم کی قربانی دینے کو اپنے لئے باعث فخر سمجھا۔ ایرانیوں، ترکوں، عربوں و انگریزوں اور اب پنجابیوں کی قبضہ گیریت و صدیوں جاری رہنے والی جنگوں کے باوجود بھی بلوچ قوم نے نہ صرف اپنی روایات و جغرافیے کی حفاظت کی ، بلکہ اپنے معاشرے میں نوآبادکاروں کی پیدا کردہ روایات کو پھیلنے نہیں دیا جو کہ بلوچ عوام کی اپنے وطن و قومی روایات سے وابستگی کا مظہر ہیں۔

انسانی تاریخ ہمیشہ حمل کلمتی، محراب خان، بابو نوروز، ڈاکٹر منان اوررضا جہانگیر سمیت ہزاروں ایسے معلوم و گمنام شہیدوں کی قربانیوں پر فخر کرے گی کہ جنہوں نے انسانی عظمت کی علامت’’ آزادی‘‘ کے حصول و تحفظ کے لئے اپنی زندگیوں کو قربان کیا۔ انہی کرداروں کے قربانیوں کی بدولت آج بھی بلوچ دنیا کے جس حصے میں ہوں اپنا تعلق بلوچستان سے ظاہر کرکے فخر محسوس کرتے ہیں۔دنیا میں جتنے قوم آج اپنا وجود برقرار رکھنے میں کامیاب ہوئے ہیں انہوں نے قبضہ گیروں کے خلاف لڑ کر ہی اپنی آزادیاں حاصل کی ہیں۔یہ ایک ناقابلِ تردید حقیقت ہے کہ قبضہ گیر طاقتوں کے خلاف جدوجہد کے بغیر انہیں اپنی زمین سے نہیں نکالا جا سکتا،بلوچ قوم نے جس طرح اس حقیقت کا ادراک کرکے قبضہ گیریت کے دن سے ہی آزادی کی جدوجہد شروع کی ہے وہ اپنی سرزمین سے والہانہ محبت کی عکاس ہے، لیکن قومی آزادی کے حصول کے لئے بلوچ قوم کے ہر فرد کو پاکستانی قبضہ گیریت کے خلاف لڑنا ہوگا۔ کیوں کہ پاکستان بلوچ قوم سے ان کی سیاسی، معاشی و معاشرتی حقوق چھین کر بلوچ عوام کے نسل کشی میں مصروف ہے۔ بلوچ قومی زبان و تاریخ کے خلاف اپنے میڈیا و دیگر ذرائع میں پروپگنڈوں میں مصروف ہے۔ قیمتی وسائل و سرزمین کے مالک بلوچ عوام کو اس حد تک معاشی حوالے سے پسماندہ کر چکی ہے کہ وہ اپنے گھر و خاندان سے سالوں دور رہ کر مزدوری کرنے پر مجبور ہیں۔ جس طرح دنیا کی دیگر قوموں نے قبضہ گیروں کے خلاف لڑ کر ان سے اپنی آزادیاں حاصل کیں، اسی طرح بلوچ عوام کو بھی نہ صرف قابض پاکستان و بلوچستان میں سرمایہ کاری کرنے والی کمپنیوں کے خلاف لڑنا ہوگا، بلکہ پاکستانی قبضہ گیریت کے حامی نام نہاد پارٹیوں نیشنل پارٹی، جماعت اسلامی اور اِن تمام سرداروں و ریاستی گماشتوں کے خلاف لڑنا ہوگاکیوں کہ بلوچستان میں ان کی وجود ہی پاکستانی قبضہ گیریت کا سہارا ہے۔

بلوچ شہدا نے اپنے جانوں کی قربانی دے کر آزادی کے حصول کا راستہ دکھایا ہے۔ بحیثیت ایک زندہ قوم بلوچ فرزندان کی یہ قومی زمہ داری ہے کہ وہ اجتماعی مفادات کے تحفظ اورقومی آزادی کے حصول کے لئے اسی راستے کا انتخاب کریں۔ قبضہ گیر کی تمام نشانیوں سے نہ صرف اپنی نفرت کا اظہار کریں بلکہ قبضہ گیر کے خلاف جدوجہد میں عملاََ شامل ہو کر قابض کو اپنی زمین سے نکال باہر کریں۔

Leave a comment

Filed under News

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s