Baloch Republican Party Germany Chapter organized a Seminar in Leipzig, Germany


This slideshow requires JavaScript.

Leipzig, Germany: The general secretary of Baloch Republican Party Germany chapter Mr. Jawad Muhammad Baloch said that Baloch Republican Party Germany chapter organized a seminar in Liebzig, Germany to highlight gross human rights violations in occupied Baluchistan by Pakistani army and its secret agencies. Muhammad Jawad said that members of Local German Association Club participated in the event. Jawad Baloch addressed to the participants that Baluchistan was an independent state before and during the British colonial era in the region.

آزاد بلوچ ریاست کی تشکیل سے ہی خطے میں دہشتگردی پر قابوپایا جاسکتا ہے۔ جواد محمذ بلوچ


After partition of India in 1947 Balochistan was forcefully annexed by the Pakistani state. Baloch people have been struggling to regain their freedom and sovereignty from Pakistan ever since. Pakistan army conducted 5 major military operations in Balochistan to suppress the political struggle of the Baloch people for their rights since 1948. Bombardment of civilian populace and massacre of innocent civilians including women & children, forceful eviction of Baloch political activists, students, lawyers, and teachers, and the custodial killings after years of disappearances and torture; has become a daily routine in Balochistan.

Jawad Muhammad further said that since the start of the 5th and on-going military operation in Balochistan, during the military dictatorship of General Pervez Musharraf more than a decade ago; more than 20,000 Baloch activists have been abducted and 8000 of them have been killed and dumped so far. While both the enforced disappearances and custodial killings continue unabated.

Nawab Akbar Bugti 80 years old Baloch leader, politically struggled for the rights of his people throughout his life; since the creation of the Pakistani state & annexation of Balochistan.

He was killed by the Pakistan army on 26th august 2006 when Pakistan army used full military power including gunship helicopters, fighter jets, tanks, SSG commandos and chemical weapons.

After the assassination Pakistan army expanded the military operation to the greater land of Balochistan to suppress the mass conviction of Baloch people which converted into a full-fledged struggle for freedom of Balochistan.

Pakistani forces now carry out continuous war crimes, and human rights abuses on daily basis; to oppress the Baloch and their democratic movement for their rights.

He added “In a recent development China has announced to invest billions of dollars in Pakistan to build an economic corridor from Balochistan’s port city of Gwadar to China’s border with Pakistan. Following these agreements Pakistani state has intensified their atrocities against the Baloch people.

The Baloch people do not accept the Chinese intervention in Balochistan, and its multi-billion dollars in aid to Pakistan which is aimed to forcefully exploit the land and natural resources of the Baloch people without their consent.

Pakistani forces have also been using religious extremism in Balochistan to distract attention from the Baloch problem and counter the secular Baloch movement. Pakistani state trains religious extremist groups to target the secular Baloch and other religious minorities in Balochistan. Such as Shia, Christians, Hindus, and Zikri; to counter secular Baloch movement for a tolerant society where rights of all humans are respected, regardless of their race, religion and political views”.

He stated that independent Balochistan is the key to peace and prosperity in the region. The Baloch being the natural ally of the western world will help counter the growing religious extremism in the region. And a secular Balochistan will be a permanent solution to the terrorism in South Asia, which will have long lasting effects for the world peace. Baloch Republican Party appeals to the international community and human rights groups to intervene in Baluchistan, and play their most important role to stop the Baloch genocide, by the Pakistan Forces and help the Secular Baloch to regain their land, rights, and freedom.

آزاد بلوچ ریاست کی تشکیل سے ہی خطے میں دہشتگردی پر قابوپایا جاسکتا ہے۔ جواد محمذ بلوچ

بلوچ ری پبلکن پارٹی جرمنی چیپٹر کے جنرل سیکرٹری جواد محمذ بلوچ نے ایک اخباری بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ بی آر پی جرمنی چیپٹر کی جانب سے جرمنی کے شہر لیبزک میں ہفتہ کے روز ایک کانفرنس کا انعقاد کیا گیا جس کا مقصد بلوچستان میں ریاستی مظالم اور وسیع تر انسانی حقوق کی پامالیوں اور بلوچستان حوالے جرمن سول سوسائٹی کو آگاہی دینا تھا۔کانفرنس میں لوکل جر من ایسوسی ایشن کلب کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔جبکہ بلوچستان کی موجودہ صورتِ حال کے حوالے سے پروجیکٹر کے ذریعے شرکاء کوجرمن زبان میں ڈاکیومینٹری بھی دکھائی گئی۔

کانفرنس سے بی آر پی جر منی چیپٹر کے جنرل سیکرٹری جواد محمذ بلوچ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 1947 ء میں ہندوستان کے بھٹوارے کے بعد پاکستان نے بلوچستان پر حملہ کرتے ہوئے اس کی آزادی کو سلب کیا تب سے بلوچ قوم اپنے وطن کی آزادی کے لیے جدوجہد کر رہی ہے۔بلوچوں کی سیاسی جدوجہد کو کچلنے کے لیے پاکستانی آرمی کی طرف سے 4فوجی آپریشن کیے جا چکے ہیں جبکہ پانچواں فوجی آپریشن 2002ء سے تاحال جاری ہے ۔ عام آبادیوں پر پاکستانی فضائیہ کی طرف سے بمباری، عام بلوچ فرزندوں کا قتلِ عام، معصوم بچوں، عورتوں ، طلبہ ، اساتذہ اور دانشوروں کو اغواء بعد شہید کرنا روز کا معمول بن چکا ہے۔پانچوا ں فوجی آپریشن جوآمر جنرل پریز مشرف کے دور میں شروع ہواتھا جس میں 20000کے قریب بلوچ سیاسی ورکروں ، طلبہ اور مختلف آزادی پسند جماعتوں سے تعلق رکھنے والے افراد کو اغواء کیا گیاجبکہ 3000 سے زائداغواء شدہ افراد کو شدید تشدد بعد شہید کرکے انکی لاشوں کو ویرانوں میں پھینک دیا گیا۔جبکہ یہ سلسلہ ہنوز جاری ہے۔80سالہ بلوچ بزرگ رہنماء نواب اکبر خان بگٹی جو بلوچ قومی آزادی اور بلوچ قوم کے خلاف نا انصافیوں پر آواز بلند کرتے ہوئے سیاسی طریقوں سے جدوجہد کر رہے تھے جنہیں پاکستانی آرمی نے 26اگست 2006ء کوتراتانی کے پہاڑوں میں انکی پناء گاہ پر شدید بمباری اور کیمیکل ہتیاروں کا بے دریغ استعمال کرتے ہوئے انہیں ساتھیوں سمیت شہید کر دیا�آآپاکستانی آرمی نے اس خونی آپریشن کا پیمانہ بڑھاتے ہوئے اسے بلوچستان کے طول و عرض میں پھیلا دیا تاکہ بلوچ قومی آزادی کی اس تحریک کو کچل کر ہمیشہ کے لیے بلوچ سرزمین پر اپنے قبضے کو قائم رکھ سکیں۔

چین کی طرف سے گوادر تا کاشغر کوریڈور جس میں بلین آف ڈالرز خرچ کیے جارہے ہیں کی کامیابی کے لیے ایک بار پھر فوجی آپریشن میں کافی تیزی لائی گئی ہے تاکہ چینی منصوبوں کو پایہ تکمیل تک پہنچا کر پاکستان اپنی گرتی ہوئی معیشت کو سہارہ دے سکے جبکہ یہ تمام معاہدے بلوچ قوم کی مرضی و منشاء کے برخلاف ہیں۔

بلوچ قوم کو بلوچستان میں چینی مداخلت قبو ل ہے نہ ہی چین کی طرف سے بلین آف ڈالرز کی سرمایہ کاری، یہ تمام منصوبے بلوچ قومی دولت کو لوٹنے کے لیے ترتیب دیے گئے ہیں۔

جواد محمذ بلوچ نے کہا کہ پاکستان ہمیشہ سے یہ کوشش کرتا رہا ہے کہ بلوچ قومی آزادی کو کچلنے کے لیے اسے مذہبی رنگ دیکر عالمی رائے عامہ کو گمراہ کر سکے اسی لیے بلوچستان میں مذہبی انتہاء پسندی کو فروغ دیکر بلوچ سیکولر معاشرے کو تباء کیا جا رہا ہے۔پاکستانی آرمی نے مذہبی انتہاء پسندوں کو تربیت دیکر انہیں بلوچستان میں اقلیتی مذاہب کو نشانہ بنانے کا ٹاسک دیا ہے۔جس میں اہلِ تشیع، زکری اور ہندوں شامل ہیں تاکہ وہ سیکولر بلوچ معاشرے کو مذہبی رنگ دیکر عالمی رائے عامہ کو گمراہ کر سکیں۔جواد بلوچ نے مزید کہا کہ آزاد بلوچ قومی ریاست ہی پورے خطے میں امن کا ضامن ثابت ہوسکتی ہے۔ جواد بلوچ نے اقوام متحدہ سمیت تمام انسانی حقوق کے تنظیموں سے درخواست کرتے ہوئے کہا کہ بلوچستان میں ہونے والی ریاستی ظلم و جبر پر آواز بلند کر تے ہوئے بلوچ قوم کی نسل کشی

Leave a comment

Filed under News

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s