Mama Qadeer Baloch denied medical treatment on Dr. Malik’s orders


Baloch national icon and Vice Chairman of Voice for Baloch Missing Persons (VBMP) Mama Qadeer Baloch is very ill. He went to the government run Bolan Medical Complex Hospital (BMCH) for treatment. But the doctors there excused treating him citing the strict orders of the Chief Minister (CM) Balochistan Dr. Malik Baloch not to treat him if he ever visits any of the doctors there. He prayed to treat him on humanitarian basis but the doctors said we cannot and if we do we will immediately be sacked as we cannot lose our job for you.

Mama Qadeer recently visited the passport office to renew his expiring passport but they also refused to issue him a new one citing Pakistan secret agencies’ strict orders not to do so. They also said that your name is listed in the Exit Control List (ECL). He argued that it is the job of Immigration Department not the Passport Office but to no avail.

audio-icon Listen audio

in English | in Urdu | in Balochi



PAKISTAN-RIGHTS-MISSING-CONFLICTS

in English

This is Mama Qadeer Baloch speaking.
I am very ill. I have been sick for many days.

Today I came to the (protest) camp and sat.

My condition got worse. I asked a friend to take me to the hospital for treatment.

So he took me to BMC (Bolan Medical College) on a motorbike at about 1:30PM.

A Pashtun doctor was sitting there. I asked him to treat me as I am very ill.

I can hardly speak. My throat has infection.

I got fever and hick ups.

I told him about two or three illnesses.

Then he asked me: “Are you Mama Qadeer?”

I said, “Yes I am Mama Qadeer.”

He said: “You cannot be treated.”

I inquired, why?

He said: “Dr. Malik (CM Balochistan) has given strict instructions to the doctors here not to treat you.

Therefore, I am obliged not to.”

I said: “I am dying. You must treat me on humanitarian basis.”

He said: “Even if you slump here and die, your coffin goes out of here, we don’t care. We love our job; we are restricted by Dr. Malik.”

So, I got back home now.

Two days ago I went to the passport office to renew my passport as it is expiring.

They also responded in the same manner that, “your passport cannot be renewed as you are listed in the ECL (Exit Control List).”

I said: “Baba ECL has got nothing to do with the passport; it is immigration’s job not yours.

You just renew my passport. But they refused doing so.”

It has been six years I am retired from my job but haven’t received my retirement money and pension yet.

I went to the courts and filed a petition. But no one listens to us there too. Four judges were changed due to my case.

Every judge I confer with says we are barred by the (secret security) agencies not to give a verdict on your case.

Just drag him along. Four judges changed but even after six years I haven’t received my pension.

Now I wonder where I should go.

My only crime is that I am raising my voice for our missing persons; for the mutilated dead bodies; raising and taking this issue everywhere.

Perhaps that is what I am being punished for.

So, I am telling my Baloch brothers, that is what happening to me but I am still determined.

If God willing I will persevere and continue my work for Baloch till my last breath.

So, I am telling you that I couldn’t receive medical treatment as doctor told me that Dr. Malik has strictly restricted us not to treat you.

I wonder if my children get sick, they may not treat them either?

I can’t go to the private hospitals as I don’t have money to afford their treatment.

Government hospitals behaving like this.

I am sick but if God willing I will continue my work as long as I am able to.

This message was recorded on August 1st, 2015


ڈاکٹر مالک نے سرکاری ہسپتالوں میں میری علاج پر پابندی لگادی،ماما قدیر کا وائس پیغام

کوئٹہ ( سنگر نیوز) وائس فار بلوچ بلوچ مسنگ پرسنز کے وائس چیئر مین ماما قدیر بلوچ نے بلوچ قوم کے نام اپنے ایک وائس پیغام میں کہا ہے کہ آج بروز ہفتہ جب میں بھوک ہڑتالی کیمپ پہنچا تو میری طبیعت بہت ناساز تھی ۔

۔بخار کی شدت سے گلا بیٹھ چکا تھا آواز نہیں نکل پارہی تھی اور پورے شیر میں درد سرایت کر چکا تھا۔تو میں کسی دوست کی توسط سے بی ایم سی ہاسٹل میں بغرض علاج وارد ہواتو وہاں پر ڈیوٹی پر موجودایک پختون ڈاکٹر کو میں نے اپنے بیماری کے متعلق بتا یا۔ڈاکٹر نے پہلے میری یہ تصدیق کی کہ آپ ماما قدیر تو نہیں ہیں ؟ میں نے کہا جی ہاں میں ماما قدیر ہوں ۔پھر انہوں نے کہا کہ تو آپ کا علاج نہیں ہوسکتا۔میں نے پوچھا کیوں ؟ انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر مالک نے ہمیں سختی سے ہدایت کی ہے کہ ماما قدیریہاں جب بھی آئے گااس کا کسی قسم کا کوئی علاج نہیں ہونا چاہیے ۔اسی لئے ہم مجبور ہیں آپ کا علاج نہیں کر سکتے۔ اس پر میں نے ڈاکٹر کو کہا کہ میں ایک انسان ہوں اور انسانی ہمدردی کی بنیاد پر تو یہ میرا حق بنتا ہے کہ آپ میری علاج کریں۔اس پر ڈاکٹر نے کہا کہ اگر ہسپتال میں آپ کو موت بھی آجائے اور آپ کی میت بھی اٹھے ہم آپ کے لئے کچھ نہیں کرسکتے کیونکہ ہمیں اپنی نوکری عزیز ہے ۔اس طرح میں بغیر علاج کئے بی ایم سی سے نکل گیا۔

انہوں نے اپنے پیغام میں کہا کہ میری پاسپورٹ کی میعاد ختم ہورہی تھی اور میں پاسپورٹ آفس بھی گیا تاکہ اسے ریونیوکروں لیکن وہاں پر موجود افسران کا رویہ بھی انتہائی ناروا تھا انہوں نے کہا کہ آپ کا پاسپورٹ ریو نیونہیں ہوسکتا کیونکہ آپ کا نام ای سی ایل میں شامل ہے ۔لیکن میں نے انہیں سمجھایا کہ ای سی ایل کا معاملہ تو امری گیشن کا ہے اسے پاسپورٹ کے ریونیو سے کوئی تعلق نہیں لیکن انہوں نے پاسپورٹ کے ریونیو سے بھی انکار کردیا۔

ماما قدیر نے اپنے پیغام میں کہا کہ میں گذشتہ6سال قبل اپنی سرکاری ملازمت سے ریٹائر منٹ لے چکا ہوں لیکن 6سال گذر جانے کے باوجود میں اپنے پنشنکی رقوم سے محروم ہوں ۔میں اس سلسلے میں عدالت بھی گیا لیکن وہاں بھی میری شنوائی نہیں ہورہی ۔چار جج میرے کیس کی وجہ سے تبدیل ہوچکے ہیں ہر جج کا کہنا تھا کہ ہم مجبور ہیں اور آپکے کیس پر فیصلہ نہیں دے سکتے کیونکہ خفیہ ایجنسیوں نے ہمیں منع کیا ہے اور کیس پر فیصلہ نہ دینے اور اسے طول دینے کا کہا ہے ۔

ماما قدیر نے کہا کہ اب میں حیران ہوں کہ کہاں جاؤں؟ میرا گناہ اور قصور محض یہ ہے کہ میں حق کی بات کر رہا ہوں ،اپنے لاپتہ بلوچوں کی بازیابی اور مسخ لاشوں کی برآمدگی کے حوالے سے آواز بلند کر رہا ہوں شاید اسی لئے مجھے یہی سزا دی جارہی ہے ۔ماما قدیر بلوچ نے کہا ہے کہ میں اپنے اس پیغام کے ذریعے بلو چ قوم کو مطلع کرنا چاہتا ہوں کہ میرے ساتھ اسطرح ہورہا ہے لیکن میرے حوصلے پست نہیں ہیں میں اپنے بلوچ قوم اور بلوچ بھائیوں کیلئے تا دم مرگ کام کرتا رہوں گا۔اس پیغام کا بلوچ قوم تک پہنچانے کا مقصد یہ تھا کہ میری بیماری کا علاج بھی نہیں ہوسکتا۔کل اگر میرے بچے بھی بیمار ہونگے تو ان کا بھی علاج نہیں ہوسکتا کیونکہ ڈاکٹر مالک نے سرکاری تمام ہسپتالوں کو سختی سے منع کیا ہے اور مجھ میں اتنی گنجائش نہیں ہے کہ میں پرائیویٹ ہسپتال میں اپنا یا بچوں کا علاج کراسکوں ۔ انہوں نے کہاکہ میں بیماری کی حالت میں بھی اپنا مشن جاری رکھوں گا۔



in Balochi

ماما قدیر بلوچ ڈاکٹر مالک ءِ گْوشگ ءِ پد ءَ علاج کنگ نہ بوت

من ماما قدیر بلوچ گپءَ اوں ، منی طبیعت باز خراب اِنت ،لہتیں روچ پیسر ءَ ہم خراب اَت۔ مرچی سہبی کہ من کیمپءَ اہتوں، کیمپ پچ کُرت منی طبیعت زیادہ خراب بوت۔ من سنگتے گوشت کہ منا بی ایم سیءَ بہ بر، ڈاکٹرءَ نشان دئیں وترا علاج کنائین اَں۔ منا سنگت موٹر سیکلءَ بُرت بی ایم سیءَ ، اے وختءَ تقریبا یک ءُ نیم بج اَت۔

من شُتوں یک پٹھان ڈاکٹرے نندوک اَت ءُُ من گُشت بابا منا علاج پکن کہ منی طبیعت باز خراب اِں، منی من گپ ہم درنئیت ، گُٹ ہم منی خراب اِں ، تپ ہم کُتہ ، ہکَّگ ہم ہست اِں۔ مطلب دو ، سے بیماریانی من گْوشت ۔ تو منا جُست ءِے کُت تو ماما قدیرئے ؟ من گوشت ہو من ماما قدیر اوں ۔ گُشت ءِے تئی علاج بُوت نہ کنت۔ من گْوشت پرچہ؟ گْوشی ڈاکٹر مالک ادا سخت انسٹرکشن داتہ ڈاکٹرانءَ کہ اے مردم ہروہدءَ اتک ایشی علاجءَ مکن اِت، گڑاں اما مجبور اَں تئی علاجءَ کرت نہ کناں۔ من گشت من مِرگءَ اوں انسانی ہمدردیءِ بنیادءَ منی علاجءَ پکن اِت۔ گشی تو ادا چَٹ مِرئے، ہسپتالءَ کپ ئے، تئی جنازہ برو امّاراکار نیست، امارا امئے نوکری دوست اِں، اماراڈاکٹر صاحبءَ منع کُتہ۔ لہٰذا من واپس بوت اوں ۔

دوچ پیسر ءَ من وتی پاسپورٹءِ شر کنائینگءَ پاسپورٹ آفسءَ ہم شُتوں، میّاد منی پاسپورٹءِ ہلاس بوہگءَ اِں۔ من گْوشیں ایشرا رینیو کنائینیں۔ ادوا شُتوں آہاں ہم مناہنچو جواب دات کہ تئی پاسپورٹ جوڑ نہ بیت، تئی نام ای سی ایلءَ اِنت۔ بابا ای سی ایل ءَ گوں پاسپورٹءَ کار نیست، آ امیگریشنءِ کاراِنت ای سی ایل ، تئی کار نئیں تو منی پاسپورٹ جوڑ کن۔ گُشی نا، آ ہم نہ کُت انت۔

اے شش سال اِنت من وتی نوکریءَ اچ ریٹائر بوتگوں۔ شش سال اِنت منی حق ادائیگی تنگی منءَ دئیگءَ نہ اِنت۔من عدالتءَ شتہ، کورٹءَ کیس ہم کُتہ ، لیکن آ اودءَ ہم امّئے کس گوشدارگءَ نہ اِنت۔ چار جج بدل بوتگ اَں منی کیس ءِ وجہءَ۔ ہر ججءِ کرامنی کیس روت جج گُشی ابا اما مجبور اَں امارءَ ایجنسی والا منع کُتگ اَں، کہ کیسءِ شما فیصلہ مہ دے اِت۔ ایشاں ہنچو لونجان کن اِت، چار جج بدل بوتگ اں لیکن اے شش سالءِ توکءَ منی پنشن حق ادائیگی منءَ رسگءَ نہ اِں۔

نوں امّا ھیران اَں کہ امّا کجا بُروان؟منی گناہ ءُُ قصور بس ہمیش اِں کہ من حقءِ توار جنئگءَ اوں وتی بیگواہیں مہلوکءِ واستا، مسخ شدہ لاشانی واستا۔ہمے توار ءُُ کُوکارءَ ہر جاگاہ برگءَ اوں۔شاید منا ہمیشی سزا رسگا اِں۔۔۔؟لہٰذا من وتی برات بلوچاں گُشگءَ اوں گومن اے وڑ ہم بوہگءَ اِں بلے منی حوصلہ پست نہ اِں۔ منی حوصلہ انشاء اللہ زیادہ بیت وتی بلوچانی واستہ من تادم مرگ کار کنین انشاء اللہ ۔

لہٰذا من شمارا اے ہال دات کہ مرچی منی بیماریءِ علاج ہم نہ بوت ،ڈاکٹر منا اے ہال دات اَں کہ ڈاکٹر مالک تئی باروءَ امارا سختیءَ منع کُتہ کہ ایشی علاجءَ مکن اِت۔من ہیرانوں منی چُکے بیمار بیت، ہو سکتا ہے آئی ہم علاج مہ کن اَں۔ پرائیویٹ ہسپتال ءُُ ڈاکٹراں من شُت نہ کنیں، کہ منا اکا زرّ ءُُ خرچ نیست، کہ پرائیویٹ ہسپتالءَ من بُرئین، وتی علاجءَ کنائینی۔ سرکارءِ اے ہال اِنت گُڑاں من ہمیش اِں بیماروں بلے من انشاء اللہ وتی کارءَ کنیں،اگاں جوڑ اوں ہم من وتی کارءَ ضرور کنین انشاء اللہ تعالیٰ

Leave a comment

Filed under Audio, News, Video

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s