Daily Archives: February 25, 2013

بلوچ لاپتہ افراد : ایک روح شکن داستان (حصہ دوم) تبصرہ : میر محمد علی ٹالپر ترجمہ: لطیف بلیدی

بلوچ کیساتھ پاکستانی ریاست کا سلوک کینہ پرور اور سفاکانہ ہے اور کمزور بہانے پیش کرکے وہ اپنی ذمہ داریوں سے انحراف جاری رکھے ہوئے ہے

Mir Mohammad Ali Talpur

ایک لاپتہ بیٹے، بھائی، یا دوست کا درد کسی شخص کی نفسیات پر گہری چھاپ بنائے رکھتا ہے۔ یہ ایک ان مٹ درد ہے، اسے نہ تو وقت اور نہ ہی دلاسے کم کرسکتے ہیں۔ دو ہفتے قبل، میں اپنے ساتھی ’جانی‘ دلیپ داس کی 91 سالہ ماں سے اپنی ادائیگیء احترام کیلئے گیا۔ اس کے پہلے الفاظ تھے، ”میرا جانی کیسا ہے؟“ وہ اب بھی یہی سمجھتی ہے کہ وہ زندہ ہے اگرچہ یہ 1975ء کا سال تھا جب اسے شیر علی مری کے ہمراہ فوج کے انٹیلی جنس نے بیل پٹّ سے اٹھایا تھا۔ انہوں نے اور ان کے شوہر، ایئر کموڈور (ر) بلونت داس، جو چند سال قبل انتقال کرگئے، نے اسکے بارے میں کوئی خبر حاصل کرنے کی بہت کوشش کی لیکن تمام محنت بیکار گئی۔ اگرچہ مسز داس کو دل کے کئی دورے پڑے ہیں لیکن لاپتہ بیٹے کی یادیں اور درد جانے کا نام ہی نہیں لیتیں۔

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up

COMMENT : Baloch missing persons: a soul-rending saga — II — Mir Mohammad Ali Talpur

The Pakistani state is unforgiving and brutal in its treatment of the Baloch and it continues to deny responsibility by presenting flimsy excuses

Mir Mohammad Ali TalpurThe pain of a missing son, brother, or a friend remains deeply etched on a person’s psyche. It is an inerasable pain, which neither time nor consolations diminish. A fortnight ago, I had gone to pay my respects to my comrade ‘Johnny’ Duleep Dass’s 91-year-old mother. Her first words were, “How’s my Johnny?” She still believes he is alive though it was in 1975 that he along with Sher Ali Marri was picked up by army intelligence at Belpat. She and her husband, Air Commodore (Retd) Balwant Dass, who passed away some years ago, tried to get some news about him but all efforts were in vain. Although Mrs Dass has suffered strokes but the memory and the pain of her disappeared son refuses to go away.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up

Pakistan is violating international conventions of human rights in Balochistan: VBMP

VBMP camp Karachi FEB-2013

The protest of families of abducted Baloch entered 1062 days as a whole and 82 Day in Karachi on Tuesday (19 February 2013) .

Delegations of Civil Society Lawyers and people from all spheres of life have continuously been visiting the VBMP’s protest camp to express their solidarity with families of abducted Baloch at Karachi Press Club.

Continue reading

Leave a comment

Filed under News

بلوچ لاپتہ افراد : ایک روح شکن کہانی (حصہ اول) تبصرہ : میر محمد علی ٹالپر ترجمہ: لطیف بلیدی

لوگ ان مظالم کو عدم دلچسپی کیساتھ دیکھتے ہیں کیونکہ لاپتہ اور ہلاک کیے گئے بلوچوں کو محض ایک شماریاتی حیثیت دیکر خارج البلد کردیا گیا ہے

Mir Mohammad Ali Talpur

بلوچ لاپتہ افراد اور ان کے تباہ حال رشتہ داروں کی خاموش اور دکھ بھری پکار انسانیت کی روح کو ریزہ ریزہ کرنے کیلئے کافی زوردار ہے، لیکن بظاہر یہاں کے مرکزی دھارے کے معاشرے اور میڈیا پر اسکا کوئی اثر نہیں پڑ رہا، دونوں اس دکھ بھری پکار پر بہرے ہیں۔ جو کچھ بلوچستان میں ہو رہا ہے، اسے معاشرہ اور میڈیا بڑی حد تک یا تو دیکھے سے انکاری ہیں یا ان مظالم کو صحیح قرار دینے کیلئے جواز پیش کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ تمام ریاستی ادارے اس جرم کے ارتکاب میں معاون اور آمادہ ہیں، اور انہوں نے متاثرہ افراد کو اپنے درد کا اظہار کرنے کیلئے اپنی زندگی اور اعضاءکا خطرہ مول لینے کیلئے مجبور کر رکھا ہے۔ یہ کوئی حیرت کی بات نہیں ہے کہ 10 فروری کو کراچی میں ایک بڑی بلوچ ریلی نے بینرز اور پلے کارڈز اٹھائے ہوئے تھے اور آزادی کا مطالبہ کر رہے تھے۔ انہوں نے آزاد بلوچستان کا ایک بڑا پرچم بھی اٹھا رکھا تھا، یہ جان کر کہ کینہ پرور پاکستانی ریاست ان لوگوں کو بھی سزا دیتی ہے جو اغواءکیے گئے لوگوں کی لاشیں وصول کرنے جاتے ہیں۔ گُلّے، بہار خان پیردادانی کے بیٹے نے اپنے رشتہ داروں، جبری طور پر غائب کیے گئے دو بھائی اور میرے سابقہ شاگرد محمد خان اور محمد نبی کی لاشیں وصول کی تھیں، 15 اگست، 2012ءکے بعد سے لاپتہ ہے۔ ریاست ان لوگوں کیلئے ایک مناسب تدفین بھی نہیں چاہتی جن کو وہ مار دیتی ہے۔

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up

COMMENT : Baloch missing persons: a soul rending saga — I — Mir Mohammad Ali Talpur

People view these atrocities disinterestedly because the Baloch missing and dead have been relegated to merely statistical status

Mir Mohammad Ali TalpurThe silent anguished cry of the Baloch missing persons and their devastated relatives is loud enough to rend the very soul of humanity, but seemingly, it has no effect on the mainstream society and media here, both deaf to this anguished cry. Society at large and the media either refuse to see what is happening in Balochistan or try to justify the atrocities. All state institutions aid and abet in this crime, forcing the affected people to risk life and limb to express their pain. Little wonder then that in Karachi on February 10, a large Baloch rally carried banners and placards demanding freedom. They carried a large independent Balochistan flag, knowing well that the unforgiving Pakistani state even punishes people who go to receive the dead bodies of abducted people. Gullay, son of Bahar Khan Pirdadani, had received the bodies of relatives — two forcibly disappeared brothers, my former students Mohammad Khan and Mohammad Nabi — and is missing since August 15, 2012. The state does not even want a decent burial for those it kills.

Continue reading

Leave a comment

Filed under Mir Mohammad Ali Talpur, Write-up