My sons are not above the National Struggle: Dr. Allah Nazar


File Photo

BALOCHISTAN – Apr 21: Baloch Pro-independence leader Dr. Allah Nazar Baloch in a statement has said that on April 18 Tehreek e Nafaz e Aman has issued a threat to the newspapers and media to target his young sons Nodan Baloch and Tamoochan Baloch is in fact a threat primarily issued by Pakistan Army and I.S.I in order to cover up their heinous crimes against Baloch nation and humanity and to hide their blood thirsty face to the world as they are using fake names to propagate against Baloch freedom fighters and install fear in the minds of Baloch masses. But, my sons are not above the national struggle, neither my sons nor I are above the thousands of martyrs and the people who are struggling for Baloch freedom, and Baloch nation already knows the barbarian actions and character of the occupying forces.

Click here for Urdu version


The threat to kill my young sons is aimed to pressurize the people like me to surrender and leave the struggle behind and it is also a hideous attempt to create fear and anxiety among Baloch people. But, we would like to make it very clear to the Pakistan Army, I.S.I and their instruments and Baloch traitors that such criminal intentions and acts will not amaze us at all.

Thousands of Balochs are forcefully disappeared, hundreds were murdered during detention and their mutilated bodies were thrown, while killing old veterans like Sardar Akbar Bugti, Sado Mari, Haji Jan Mohammad Mari, Naseer Kamalan, Haji Mohammad Ramzan Zehri, Hafiz Abdul Qadir Nadarmani Mengal, 13 years old Majeed Zehri, young Waheed alias Balach, young Yasir Jan, sister of Brahmdagh Bugti, the martyrdom of her young girl and hundreds of other such incidents could not budge the Baloch nation from its struggle for independence then their new atrocities will not de-track the Baloch nation from obtaining its national aims and objectives.

The fact of the matter is that all of these inhumane acts are being committed against Baloch because of the Pakistani occupation and the authority of its murderous military and secret agencies over occupied Balochistan. The essence of our struggle is to end this authority so that no other oppressor would be able to disappear, kill or threaten to do so to the Baloch sons.

Baloch national struggle is being carried out in accordance to the international laws, Islamic laws, natural laws and according to the internationally recognized charter of human rights and is genuine as well as on the right path. Just like Pakistan Army could not stop the Bengalis to achieve their independence after mass murdering three million of their population, similarly they cannot stop the Baloch movement with the genocide of Baloch.

However, those Balochs who are taking side with Pakistan Army, I.S.I and other murderous instruments and have become their agents and death squad members are doing nothing except for blackening their souls. They should refrain themselves from these hostile acts, otherwise they will have to face the same fate of those Biharis, Al-Shams, Al-Badar, Jamait-e-Islami’s Bengali traitors who fought against Bengali liberation movement and sided with Pakistan Army.

These traitors are neither being accepted by their colonial master Pakistan nor Bangladesh is giving them citizenship. Even after 41 years of independence they are still rotting in the temporary camps and jails. It will be an honor for a member of independence struggle like me if mine or my children’s blood is used for the irrigation of freedom movement.

Courtesy:Daily Tawar
Translated by Borhaan Arifee

URDU NEWS

میرے فرزند قومی جہد سے بالا نہیں: ڈاکٹراللہ نذربلوچ

بلوچ آزادی پسند قومی رہنما ڈاکٹر اللہ نذربلوچ نے اپنے جاری کردہ بیا ن میں کہا کہ18اپریل کو بازاخبارات میں تحریکِ نفاذِ امن کی طرف سے میرے کمسن فرزندوں نودان بلوچ، تموچن بلوچ کو نشانہ بنانے کی دھمکی آمیز خبردراصل پاکستانی فوج اورآئی ایس آئی کی طرف سے بلوچ قوم اور انسانیت کے خلاف اپنی جرائم پرپردہ ڈالنے اور اپنا خوانخوار چہرہ چھپانے کے لئے فرضی اور جعلی نام استعمال کرتے ہوئے بلوچ آزادی پسندوں کے خلاف پروپیگنڈہ اور قوم میں خوف پیداکرنا چاہتے ہیں۔مگرمیرے فرزند قومی جہد سے بالا نہیں، ہزاروں بلوچ شہداءاور آزادی کے جہد کاروں سے نہ میں بالا تر ہوں اور نہ میرے فرزند۔ مگربلوچ قوم قابض ریاست اور ان کے کارندوں کو ان کے سفاکانہ عمل وکردار سے پہچانتا ہے۔ پاکستانی فوج، آئی ایس آئی کی جانب سے میرے کمسن فرزندوں کو قتل کی دھمکی مجھے اور میرے جیسے بلوچوں کو قومی آزادی کی جدوجہد سے دست بردار کرانے کے لئے دباﺅ ڈالنے اور بلوچ قوم کے اندر ایک خوف وہراس پید اکرنے کی گھناؤنی کوشش ہے۔

مگر ہم پاکستانی فوج، آئی ایس آئی اور اُن کے آلہ کاربلوچ قومی غداروں پرواضح کرتے ہیں کہ ان کی ایسے مجرمانہ ارادوں اور عمل میں ہمارے لئے حیرانگی کی کوئی بات نہیں ہے۔ ہزاروں بلوچوں کو جبری لاپتہ کرنے، سینکڑوں اسیر بلوچوں کو دروان حراست شہید کرکے ان کی مسخ شدہ لاشیں پھینکنے، سرداراکبربگٹی، سعدومری، حاجی جان محمد مری، نصیرکمالان، حاجی محمد رمضان زہری، حافظ عبدالقادر ندرمانی مینگل جیسے ضعیف العمر بزرگوں، 13سالہ مجید زہری، کمسن وحید عرف بالاچ، کمسن یاسرجان، براہمدغ بگٹی کی ہمشیرہ، کمسن بچی کی شہادت اور دیگرسینکڑوں واقعات جب بلوچ قوم کو آزادی کی جدوجہد سے پیچھے نہ ہٹاسکے تو ان کی طرف سے نئے مظالم بھی قومی آزادی کے لئے بلوچ کے ارادوں میں کوئی لغزش پیدا نہیں کرپائیں گے۔

دراصل بلوچ، بلوچستان پرجبری قبضہ کے باعث بلوچوں کی قومی وانفرادی زندگی پرقابض پاکستان کے خونخوار عسکری وخفیہ اداروں کو جو اختیاروقدرت حاصل ہے اسی کے بل بوتے پر وہ بلوچ فرزندوں کو اغواءوشہید کرتے ہیں۔ہماری جدوجہد درحقیقت ان کے اسی اختیار وقدرت کے انجام کے لئے ہورہی ہے تاکہ آئندہ کوئی جابر قوت بلوچ فرزندوں کو لاپتہ اور شہید نہ کرسکے اور ایسا کرنے کی دھمکی نہ دے سکے۔ بلوچ قومی تحریک آزادی بین الاقوامی واسلامی قوانین، قانون قدرت اور انسانی حقوق کے عالمی منشور کے عین مطابق سچّائی اور حق پرمبنی ہے۔جس طرح1971میں پاکستانی فوج نے30لاکھ سے زائد بنگالی مسلمانوں کا قتل عام کرکے بھی بنگلہ دیش کی آزادی کو روک نہ پائے،اسی طرح بلوچ کی نسل کشی کرکے بھی وہ بلوچ قومی تحریک کا راستہ روک نہ پائیں گے۔ البتہ وہ بلوچ جوپاکستانی فوج، آئی ایس آئی ودیگر قاتل اداروں کے آلہ کارمخبر یا ڈیتھ اسکواڈ کا حصہ بن کراپنی روح سیاہ کررہے ہیں وہ اپنا دشمنانہ عمل ترک کرکے آئندہ نسلوں کا مستقبل تاریک ہونے سے بچائیں ورنہ ان کی آئندہ نسلیں اسی انجام سے دوچارہوںگی جس طرح بنگلہ دیش کی تحریک آزادی کے خلاف پاکستانی فوج کا ساتھ دینے والے بہاری، الشمس، البدر،جماعت اسلامی کے غدّار بنگالی دوچارہیں۔

ان غدّاروں کو نہ تو ان کا صادق نوآبادیاتی آقا پاکستان ان کو اپنانے کے لئے تیارہے نہ بنگلہ دیش انہیں شہریت دے رہی ہے۔ بنگلہ دیش کی آزادی کے41سال کے بعد آج بھی وہ عارضی کیمپوں اور جیلوں میں سڑرہے ہیں۔ مجھ جیسے جہد آجوئی کے ایک جہد کار کے لئے یہ شرف ہوگا کہ مادریں سرزمین کی آبیاری میں میرے یا میرے فرزندوں کا لہو شامل ہو۔

Leave a comment

Filed under News

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s